Featured Post

Wake-up Call to Muslims

Muslims have to work out the solutions to their problems, themsleves:- (1) Read online or dowlnoad E Book, pdf ...

16 February 2015

Growing European concerns about Muslim migrants

A protest by Pegida which drew just 150 people was dwarfed by a counter-demo of about 2000 on Feb 8, 2015.
For the last couple of months, weekly anti-Muslim demonstrations have been taking place in several German cities. Led by Pegida, the acronym for its German name of Patriotic Europeans Against the Islamisation of Europe, the protests began in Dresden and have spread to other cities.

These marches have attracted counter-protests that often outnumber the anti-Muslim demonstrators. Oddly, only 0.5 per cent of Dresden’s population is Muslim. And although a demo in Leipzig drew 25,000 marchers, the numbers have fallen since. One reason is that the leader of the movement, Lutz Bachmann, was revealed to be a closet neo-Nazi when a photograph of him with a Hitler moustache and haircut surfaced.

Even though many German Muslims are of Turkish origin who mostly speak German and are fairly well integrated, it is the new wave of asylum seekers from Syria who have caused alarm.

And while Europeans as a whole tend to be uncomfortable about the presence of Muslims living in their midst, they forget that countries like Lebanon, Jordan, Turkey and Pakistan are hosts to far larger numbers of refugees. In fact, one in four of those living in Lebanon today is a Syrian refugee.

Although these protests show signs of dying down, disquiet over the rising Muslim presence in Europe is growing. A few days ago, almost all British newspapers carried front-page stories to inform readers that the Muslim population in England and Wales had nearly doubled in ten years, rising from 1.55 million in 2001 to 2.71 million in 2011.

But more than its size, it is the composition of the population that is causing concern in Britain: 1 in 3 Muslims is under 15 years of age, compared with 1 in 5 overall; and 4pc of Muslims are over 65 compared with 16pc overall. These numbers translate into a relatively young cohort, many of whom will be reaching reproductive age soon. Given the generally larger size of Muslim families, many fear that the numbers will keep rising at a higher rate than the general population.

Although only one Briton in 20 is Muslim, the public perception is that the numbers are four times this figure. One reason for this skewed estimate is that the Muslims are a very visible minority who tend to congregate in urban areas. An increasing number of Muslim girls and women have taken to covering themselves either in headscarves or in full burqas or niqabs, while the men often sport long, easily identifiable beards.

And while other migrants generally dress like locals and blend in, Muslims tend to stay apart, with religious and cultural factors perpetuating this divide. Every few weeks, incidents to do with the sexual exploitation of young white girls, alleged terror plots, or the willingness of many young Muslims to join the Islamic State enhances the negative image many Brits have of Muslims and Islam.

If growing numbers of Britons, with all their tolerance, can feel this hostility, then things are far worse in much of Europe. In France, the recent Charlie Hebdo killings have boosted the right-wing, Islamophobic Front National’s poll ratings. As it is, widespread dissatisfaction with immigration policies has made the party a force to reckon with.

From Sweden to Netherland, anti-Muslim sentiments are rising, fed by images of horrors committed by organisations like Boko Haram, the Islamic State and the Taliban. Hardly have the images of one atrocity faded that another is headline news. This steady barrage of horror stories, combined with the perception that Muslims in Europe constitute a fifth column prone to join extremists groups and attack the host communities, has hardened attitudes. Now, even liberal politicians need to toughen their stance on immigration to address widely held public concerns.

One result of growing prejudice is to make it harder for young Muslims to get jobs. In France, Muslim unemployment goes up to over 40pc in some areas. In Britain, only 20pc are in full time employment, compared with 35pc overall. But then 18pc of Muslim women are at home, while only 6pc of British women fall in the category of full-time housewives. And while 24pc of all Muslims are educated to degree level, the figure is 44pc for Hindus.

Housing is another issue that divides the communities. Relatively few Muslims live in homes they own, with the majority in assisted housing. Some council estates are breeding grounds for crime, with gangs fighting each other in vicious turf wars. Racism is rife, and bullying common. In these conditions, many Muslim kids band together for protection; some of them are then radicalised in local mosques or online.

In countries across Europe, the link between poverty, unemployment, overcrowded ghettos and Islamic radicalism has been well established. But there are no easy answers. The reality is that nobody planned this influx or encouraged it. But laws regarding the right to asylum, and to bring in spouses, have opened the door to growing numbers of legal immigrants. And then of course there are illegal ways that involve people smugglers and dangerous routes.

In a 2013 poll conducted by the British Social Attitudes, 62pc of those surveyed said they were worried that an increasing Muslim population would weaken Britain’s national identity. In 2003, 48pc voiced a similar concern. And an online survey conducted by The Daily Telegraph suggests that 88pc of its readers are worried by the presence of large numbers of Muslims. However, the Telegraph is a right-wing newspaper, so many of its readers would tend to be anti-immigration.

Muslims in Europe are thus caught between a rock and a hard place. Their faith and their culture sets them apart from the host community. This isolates them and erects walls at a time when they should be building bridges.

Growing European concerns about Muslim migrants
by Irfan Husain, dawn.com

یورپی مسلمانوں کے بڑھتے ہوئے مسائل

گزشتہ دو ماہ سے جرمنی کے کئی شہروں میں مسلمانوں کی مخالفت میں مظاہرے ہورہے ہیں۔ PEGIDA( یورپ میں اسلام کے پھیلائو کی مخالفت کرنے والے محب ِ وطن یورپی شہریوں کی تنظیم)کی قیادت میں ان احتجاجی مظاہروں کا آغاز ڈرسڈن سے ہوا تھا ، لیکن اب ان کا دائرہ دیگر شہروں تک بھی پھیل چکا ہے۔ ان مظاہروںکے رد ِعمل میں بھی مظاہروں کا سلسلہ شروع ہوچکا ہے اور ان میں شرکاکی تعداد اسلام مخالف مظاہروں کے شرکا سے زیادہ ہے۔ عجیب بات یہ ہے کہ مسلمان ڈرسڈن کی آبادی کا صرف اعشاریہ پانچ فیصد ہیں۔ اگرچہLeipzig میں ہونے والے ایک مظاہرے میں پچیس ہزار شرکا شامل تھے لیکن ان کی تعداد میں بتدریج کمی دیکھنے میں آرہی ہے۔ اس کی ایک وجہ اس مسلم مخالف تنظیم کے رہنما کے بارے میں ہونے والا انکشاف تھا کہ وہ نیونازی کے قریب لگتے ہیں۔ اس کا گمان اُس وقت ہوا جب ان کی ایک ایسی تصویر منظر ِعام پر آئی جس میں ان کی مونچھیں اور بالوں کا سٹائل ہٹلر سے مشابہہ تھے۔
بہت سے جرمن مسلمانوں کا تعلق ترک خطے سے ہے اور وہ نہ صرف جرمن زبان بولتے ہیں بلکہ مقامی کلچر سے بھی خود کو ہم آہنگ کرچکے ہیں۔ اُن کی وجہ سے اس ملک میں کبھی کوئی مسئلہ پیدا نہیں ہوا لیکن شام سے ہجرت کرتے ہوئے پناہ کی تلاش میں آنے والے افراد کی وجہ سے خطرے کی گھنٹی بج اُٹھی ۔ یورپ کے افراد مجموعی طور پرمسلمانوں کو اپنے درمیان پاکر بے چینی محسوس کرتے ہیں لیکن وہ بھول جاتے ہیں کہ بہت سے مسلمان ممالک، جیسا کہ لبنان، اردن، ترکی اور پاکستان نے بھی بڑی تعداد میں مہاجرین کو پناہ دے رکھی ہے۔اس وقت لبنان میں رہنے والا ہر چوتھا شخص شام سے آنے والا مہاجر ہے۔ 
اگرچہ یہ احتجاجی مظاہرے دم توڑرہے ہیں لیکن یورپ میں مسلمانوں کی موجودگی سے پیدا ہونے والی بے چینی میں اضافہ ہورہا ہے۔ چند دن پہلے کم و بیش تمام برطانوی اخبارات نے پہلے صفحے پر کہانیاں شائع کرتے ہوئے اپنے رہنمائوں کو خبردار کیا کہ گزشتہ دس سال کے دوران انگلینڈ اور ویلز میں رہنے والے مسلمانوں کی تعدادمیں دوگنا اضافہ ہوچکا ہے۔2001ء میں یہ تعداد 1.55 تھی جبکہ 2011ء میں یہ بڑھ کر 2.71 ملین ہو گئی۔ تاہم آبادی کے بڑھتے ہوئے حجم سے بھی زیادہ جو چیز تشویش ناک ہے وہ اس آبادی میں عمر کا تناسب ہے۔ برطانیہ کی مجموعی آبادی میں پندرہ سال سے کم عمر افراد کا تناسب 5:1ہے مگر مسلم آبادی میں یہ تناسب 3:1ہے۔ اسی طرح پینسٹھ سال سے زائد افراد برطانوی معاشرے کا سولہ فیصد ہیں لیکن صرف چار فیصد مسلمانوں کی عمر پینسٹھ سال یا اس سے زائدہے۔ ان اعدادوشمار سے یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ یہاںمقیم مسلمان نسبتاً جوان ہیں۔ ان میں سے بہت سے جلدہی بلوغت کی عمر کو پہنچنے والے ہیں۔ چونکہ مسلمان خاندانوں کا حجم عام برطانوی خاندانوں سے کہیں بڑا ہوتا ہے، اس لیے ماہرین کو خدشہ ہے کہ مسلمانوں کی آبادی مجموعی برطانوی آبادی کی نسبت کہیں تیزی سے بڑھے گی۔ اس کے علاوہ مسلمانوں کی آبادی میں موجودہ اصل تعداد سے کہیں بڑھ کے محسوس ہوتی ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ یہاں مسلمانوں کی آبادی کا تناسب 20:1ہے لیکن عام تاثر یہ ہے کہ یہ تناسب 4:1ہے۔ اس غلط تاثر کی وجہ یہ ہے کہ مسلمان آبادی میں واضح طور پر دکھائی دینا اپنا مذہبی فریضہ سمجھتے ہیں۔ زیادہ تر مسلمان لڑکیاں اور عورتیں سرکو ڈھانپتی ہیں یا نقاب یا برقع پہنتی ہیںجبکہ مسلمان مرد اپنی طویل داڑھیوں کی بدولت دور سے ہی پہچانے جاتے ہیں۔ 
برطانوی معاشرے میں دوسرے مذاہب اور ممالک کے تارکینِ وطن بھی رہتے ہیں لیکن وہ مقامی کلچر میں ضم ہوکر اپنی مذہبی شناخت کو اجاگر نہیں کرتے۔ کم وبیش ہرہفتے سفید فام لڑکیوں کو جنسی طور پر ہراساں کرنے، مبینہ طور پر دہشت گردی کے منصوبے بنانے یا داعش کی صفوں میںشامل ہوکر مشرق ِ وسطیٰ میں جہاد کی غرض سے جانے والے مسلمانوں کے نام سامنے آتے ہیں۔ ان سرگرمیوں سے برطانوی معاشرے میں مسلمانوں اور ان کے مذہب کے بارے میں منفی تاثر تیزی سے پھیل رہاہے۔ اگرچہ یہاں برداشت اور تحمل کا لیول بہت بلند ہے اور مذہبی منافرت کی ہرممکن حوصلہ شکنی کی جاتی ہے لیکن اگر مسلمانوں سے نالاں برطانوی شہریوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا گیا تو مسلمانوں کے مسائل مزید بڑھ جائیں گے۔ حالیہ دنوں فرانس میں چارلی ہیبڈو ہلاکتوں کی وجہ سے اسلام مخالف دائیں بازو کے فرنٹ کو نیشنل سروے پول میں بلند ریٹنگ مل گئی ہے۔ یہ حقیقت ہے کہ تارکین ِ وطن کی بڑھتی ہوئی تعداد کی وجہ سے دائیں بازو کی پارٹیاں طاقت ور ہوتی جارہی ہیں۔
سویڈن سے لے کر ہالینڈ تک، مسلمانوں کے خلاف جذبات میں اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ اس آگ پر بوکوحرام، داعش اور طالبان کے وحشت ناک مظالم مزیدتیل گرارہے ہیں۔ اس صورت ِحال کی وجہ سے ایسی خبریں اور مضامین عوام کی توجہ کھینچ رہے ہیں کہ مقامی مسلمان ان انتہا پسند تنظیموں کا آلہِ کار بن کر میزبان ممالک کے لیے پریشانی پیدا کردیں گے۔ اس تشویش کی وجہ سے میزبان معاشروں کا مسلمانوں سے برتائو سخت سے سخت ہوتا جارہا ہے۔ حتیٰ کہ لبرل سیاست دان بھی ایمی گریشن کے قوانین کو سخت بنانے کی بات کررہے ہیں۔ اس رویے کی وجہ سے نوجوان مسلمانوں کو ملازمت تلاش کرنے میں بھی دشواری پیش آرہی ہے۔ فرانس کے بعض علاقوں میں مسلمانوں میں بیروزگاری کی شرح چالیس فیصد تک پہنچ چکی ہے۔ برطانیہ میں بھی صرف بیس فیصد مسلمان کل وقتی ملازمت کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ اٹھارہ فیصد مسلمان خواتین صرف گھر میں رہتی ہیں جبکہ مجموعی طور پر برطانوی خواتین میں سے صرف چھ فیصد ہوم وائف ہیں۔ صرف چوبیس فیصد مسلمان ڈگری لیول تک تعلیم یافتہ ہیں جبکہ یہاں رہنے والے چوالیس فیصد ہندو ڈگری لیول تک تعلیم یافتہ ہیں۔ 
ہائوسنگ بھی ایک مسئلہ بن کر معاشرے کو تقسیم کررہا ہے۔ بہت کم مسلمانوں کے اپنے گھر ہیں۔ یہاں بھی کچھ جرائم پیشہ افراد کے گروہ زمین کے لیے لڑتے رہتے ہیں۔ اس کے علاوہ کچھ علاقوں میں نسل پرستی بھی بڑھ رہی ہے۔ ان حالات کی وجہ سے مسلمان نوجوان آپس میںمل کر رہتے ہیں۔ ان میں سے کچھ کو مساجد سے یا آن لائن انتہاپسندی کی تعلیم بھی ملتی ہے۔ اس کی وجہ سے گروہ کے دیگر نوجوان بھی یہ راہ اختیار کرلیتے ہیں۔ دیکھنے میں آیا ہے کہ یورپی ممالک میں رہنے والے مسلمانوں کی غربت، بے روزگاری اور غربت زدہ علاقوں میں رہنے اور انتہا پسندی میںگہرا تعلق ہے۔ تاہم ان مسائل کا کوئی آسان حل نہیں ہے۔ قانونی طریقے سے پناہ کے متلاشی آتے ہیں لیکن غیر قانونی طریقے سے آنے کے راستے بھی مسدود نہیں۔ ڈیلی ٹیلی گراف کا کہناہے کہ اس کے اٹھاسی فیصد قارئین مسلمانوں کی موجودگی کی وجہ سے پریشانی محسوس کرتے ہیں۔ درحقیقت اس وقت یورپ میںرہنے والے مسلمانوں کے لیے کڑا وقت آرہا ہے۔ ان کا عقیدہ اُنہیں مقامی معاشرے میں پوری طرح ضم ہونے سے روکتا ہے ۔ اس کے علاوہ دنیا کے دیگر خطوں میں مذہبی انتہا پسند تنظیموں کی کارروائیوں کا خمیازہ بھی انہیں بھگتنا پڑتا ہے۔ 

More on RELIGION, HUMANITY, CULTURE, ETHICS, SPIRITUALITY & PEACE http://faithforum.wordpress.com http://www.youtube.com/user/Abbujak http://peace-forum.blogspot.com